ہفتے میں ایک دن سکول میں بچوں کامٹی، کیچڑ میں کھیلنا لازمی قرار

نیو زی لینڈ میں نیچرل اسکول کے بچوں کیلئے ہفتے میں ایک دن روایتی کتابی پڑھائی چھوڑ کر مٹی کیچڑ، جانوروں سے کھیلنا اور روز مرہ کے کام کرنا لازمی قرار دیا گیا ہے۔ نیچرل اسکول میں بچوں کو چیلنجز سے نمٹنے کے لئے تربیت فراہم کی جاتی ہے۔

نیوزی لینڈ کے دارالحکومت ویلنگٹن سے 45 منٹ شمال میں واقع ایک ایشٹن بش اسپراؤٹس نیچر اسکول ہے۔ جس میں چار سے بارہ سال کی عمر کے بچے ہر ہفتے کام کرنے والے کھیتوں پر جاتے ہیں، اپنا گھر یا مرکزی دھارے کے اسکول چھوڑ کر دن بھر کیچڑ میں کھیلتے ہیں، کیمپ فائر بناتے ہیں، کیڑوں کو پکڑتے ہیں، دیسی درخت لگاتے ہیں اور کیچڑ میں بھی لوٹ پوٹ ہوتے ہیں۔
نیوزی لینڈ کے ایک نیچر اسکول کے بانی لیو اسمتھ کا کہنا ہے کہ یہ اس کا مقصد بچوں میں قیادت کی صلاحیتوں کو اجاگر کرنا ہے کہ اور وہ بچوں کو چھوٹی عمر میں ہی اس قابل بنانہ ہے کہ وہ اپنے راستے میں آنے والی رکاوٹوں کو خود ہٹائیں۔

لیو اسمتھ کا کہنا ہے کہ میں چاہتا ہوں کے بچے باہر خود کو چیلنج کریں اگر انہیں خطرے کا تجربہ کرنے کا موقع نہیں ملے گا تو وہ زندگی کے دوسرے حصوں میں خطرہ مول لینا نہیں سیکھیں گے۔

ایک رپورٹ کے مطابق اس وقت نیوزی لینڈ میں 80 سے زیادہ نیچر اسکول ہیں اور تقریبا 2،000 اساتذہ کی کمیونٹی ہے۔
نیچر اسکول، جسے جنگلاتی اسکول یا جھاڑیوں کے اسکول بھی کہا جاتا ہے۔ برطانیہ اور آسٹریلیا سمیت دنیا بھر میں پھیل رہے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.