عاصمہ شیرازی کا کالم: اور اب انتخابی نظریہ ضرورت!

کیا کچھ بدلا ہے یا کچھ بدلنے کی توقع؟ ریورس گیئر، تبدیلی یا پھر سیاست میں تطہیر کا عمل۔ جو بھی ہے اسے حالات کا تقاضا کہیں یا مستقل خود فریبی۔ پاکستان میں سیاست اب باقاعدہ ایک سائنس بن چکی ہے اور اُس سے زیادہ حساب۔ سیاسی الجبرا میں ایک ہی مشق ہے جو بار بار ہوتی چلی آ رہی ہے، جمع تفریق اور اُس پر حاوی الجبرا۔۔ مشق کل بھی جاری تھی آج بھی جاری ہے۔

انتخابات کی جمع تفریق قطعی طور پر ایک مختلف سائنس ہے، مقبولیت اس کا پیمانہ نہیں مگر قبولیت اس کی آزمائش ضرور ہے۔ پاکستان کی سیاست میں بے حد مقبول الجبرا ’الیکٹیبلز‘ ہیں جو ہواؤں کے رخ کے موافق چلتے ہیں اور صرف مفاہمت کے نظریے پر یقین رکھتے ہیں۔

قصہ مختصر انتخابات سے قبل ہی آنے والی حکومت کا اندازہ ان ’ہمیشہ جیتنے والوں‘ کی تحریک سے معلوم کیا جا سکتا ہے یا یوں سمجھیے کہ یہ وہ ’نقیب‘ ہیں جن کے پیروں کے نشان اقتدار کا پتہ دیتے ہیں۔ کھوجی ان کی کھوج میں رہتے ہیں اور ہر انتخاب سے پہلے ان کی چال شروع ہو جاتی ہے۔ جس کی جھولی میں یہ آ گریں وہ سکندر مگر یہ اشارے بنا جھولی میں گرتے بھی نہیں۔

خاص ہیں ترکیب میں یہ ’الیکٹیبلز‘ جن کو عرف عام میں لوٹا اور شائستہ زُبان میں موقع پرست کہا جاتا ہے۔ جن کا نظریہ اقتدار اور بیانیہ ’انحصار‘ ہے۔

یہی وہ خاص ترکیب ہے جو ہر سیاسی جماعت اپنی انتخابی حکمت عملی کا حصہ بنانا چاہتی ہے اور اقتدار کے حصول کا پہلا مرحلہ یہی قرار پاتا ہے۔ بلوچستان میں 2013 میں ن لیگ کا حصہ بننے والے الیکٹیبلز 2018 کے انتخابات سے قبل ہی تب پیپلز پارٹی کی مدد سے ن لیگ سے الگ ہوئے جبکہ اٹھارہ کے انتخابات میں پیپلز پارٹی کی بجائے تحریک انصاف کے حصے آئے۔ جنوبی پنجاب کے معروف ’الیکٹیبلز‘ کو بھی تحریک انصاف کے حوالے کر دیا گیا۔ بلوچستان شروع سے ہی ’مقتدر‘ حلقوں کی انتخابی جنت ہے جبکہ تاثر ہے کہ اس جنت کا ٹکٹ بھی طاقتور حلقوں سے ہی ملتا ہے۔

اس بار بھی بلوچستان سے درجن بھر ’الیکٹیبلز‘ ن لیگ کا حصہ بننے کو تیار ہیں جبکہ سندھ میں ایسی ہی ’چائنہ کٹنگ‘ کا آغاز ہو چکا ہے۔ پیپلز پارٹی مخالف محاذ کی بنیاد رکھ دی گئی ہے۔ بظاہر کوشش ہے کہ سندھ میں پیپلز پارٹی کو پہلے سے کم نشستیں حاصل ہوں اور ایک مضبوط اپوزیشن بھی سندھ میں دستیاب رہے۔ اب اس نظرِ کرم کی وجہ محض ن لیگ کو کامیاب کرنا ہے یا پیپلز پارٹی کی سندھ میں واضح اکثریت کو توڑنا اس بارے خدوخال تا حال غیر واضح ہیں۔

آصف زرداری

اس صورت حال کو بھانپتے ہوئے پیپلز پارٹی کے شریک چئیرمین آصف علی زرداری نہ صرف خاموش ہیں بلکہ اُن کی خاموشی اک پیغام بنتی جا رہی ہے۔ اس ’خاموشی‘ کی ایک زبان بھی ہے اور شاید قیمت بھی۔۔ پنجاب میں تحریک انصاف کے ساتھ کسی بھی انتخابی اتحاد کا حصہ بننا پیپلز پارٹی کے لیے ایک اہم کارڈ ثابت ہو سکتا ہے جو طاقتور حلقوں کو کسی صورت قبول نہ ہو گا تاہم پیپلز پارٹی ابھی ’دیکھو اور انتظار کرو‘ کی پالیسی اختیار کیے ہوئے ہے۔

ن لیگ ’آنکھ کا تارا‘ ہے اور چاند اپنے محور سے ہٹ کر تارے کے گرد گھوم رہا ہے۔ طاقت کے اس محور میں ضرورت سب سے بڑی ایجاد ہے۔ ن لیگ نے فی الحال سیاست میں ’نظریہ ضرورت‘ کو ہی ڈھال بنا رکھا ہے یہی وجہ ہے کہ بلوچستان کے الیکٹیبلز سے ابتداء ہو رہی ہے۔

پنجاب کی سیاسی مجبوریوں کے باعث ’روایتی الیکٹیبلز‘ سے مُنھ موڑا گیا جو اب استحکام پاکستان کا حصہ ہیں تاہم جن حلقوں میں الیکٹیبلز مضبوط ہیں وہاں اب بھی اُسی نظریہ ضرورت سے کام لیا جائے گا جس سے ماضی میں تحریک انصاف نے فائدہ اُٹھایا تھا اور پھر ایک صفحے کی وہ حکومت تشکیل دی تھی جو بمشکل ساڑھے تین برس چلی۔

دوسری جانب ن لیگ تحریک انصاف کے تتر بتر ہونے اور عمران خان کے سیاست سے غائب ہونے کا فائدہ اُٹھانا چاہتی ہے۔ ایسے میں کیا تحریک انصاف کے لیے انتخابی کھلاڑی، حلقے کی سیاست میں سرگرم کارکنوں، انتخاب کے دن وسائل یہاں تک کہ پولنگ ایجنٹ جیسے لوازمات دستیاب ہوں گے؟ تحریک انصاف کے لیے نا صرف یہ بڑا چیلنج ہے بلکہ اصل امتحان بھی ہے۔

Imran Khan

کپتان کی انتخابات میں عدم موجودگی اور بیشتر رہنماؤں کی جانب سے لاتعلقی، گرفتاریاں اور انتشار تحریک انصاف کے ووٹرز کے لیے پریشان کُن صورت حال ہے، خان صاحب کے بعد کسی بھی رہنما کا جماعت کی نمائندگی نہ کرنا ایک اہم بحران ہے تو دوسری جانب اُن کے حامی ووٹروں کو متحرک کرنے کے لیے کسی سیاسی بیانیے کا نہ ہونا بھی وہ اہم وجہ ہے جس کا بھر پور فائدہ اُن کے سیاسی مخالفین اُٹھا سکتے ہیں۔

یہ حقیقت اپنی جگہ ہے کہ عمران خان کا ووٹر تاحال اپنی جگہ موجود ہے اور جماعت کے ساتھ جڑا ہے تو کیا عمران خان کے بغیر انتخاب میں پی ٹی آئی کا ووٹر باہر آئے گا؟ اور کیا ن لیگ اپنے ووٹر کو بھرپور طریقے سے متحرک رکھ پائے گی؟ یہ دونوں سوال ایک دوسرے کے لیے اہم ہیں۔ یاد رہے پنجاب کی انتخابی سیاست میں ایک جماعت کی حمایت میں ووٹر کا باہر نکلنا کسی بھی دوسری جماعت کی شکست کے لیے اہم ہو گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.